شاہ محمود قریشی

image description

تعارف

شاہ محمود قریشی

پاکستان تحریک انصاف کے نائب صدر شاہ محمود قریشی کا تعلق ملتان کے روحانی خانوادے سے ہے۔ وہ پیپلزپارٹی کے دورحکومت میں وزیر خارجہ بھی رہے۔بعد ازاں ریمنڈڈیوس کے معاملے پر اختلافات کے باعث وہ پی پی پی سے الگ ہو کر پی ٹی آئی کا حصہ بن گئے۔

22 جون 1956کو مری میں پیدا ہونے والے شاہ محمود قریشی کا تعلق ایک متمول سیاسی و روحانی خاندان سے تھا۔ بہاﺅ الدین زکریا کے مزار کی گدی اسی خاندان کے پاس ہے۔

شاہ محمود قریشی نے لاہور سے گریجویشن اور کیمبرج یونیورسٹی، انگلینڈ سے ماسٹرز کی سند حاصل کی۔ سیاست گھٹی میں تھی۔ 1985 تا 1993، وہ لگاتا نو برس رکن صوبائی اسمبلی رہے۔انھوں نے صوبائی کابینہ میں بھی ذمے داریاں نبھائیں۔ مشرف دور میں ملتان کے میئر کا عہدہ بھی سنبھالا۔

سیاسی سفر کے اوائل میں وہ مسلم لیگ ن سے متعلق رہے کہ ان کے سیاسی مخالفین یوسف رضا گیلانی کا تعلق پی پی پی سے تھا، تاہم پھر نواز شریف سے پیدا ہونے والے اختلافات کے باعث وہ پی پی پی کا حصہ بن گئے۔پی پی پی میں انھوں نے تیزی سے ترقی کی۔ وہ پارٹی ترجمان بھی رہے۔ملتان کے جاوید ہاشمی اور ان کے درمیان سخت مقابلہ رہا،ایک بار انھیں ہاشمی کے ہاتھوں شکست بھی ہوئی۔

2006 میں انھیں بینظیر بھٹو نے پی پی پنجاب کا صدر بنایا۔ 2008میں وہ قومی اسمبلی کا حصہ اور بعد ازاں وفاقی وکیل بنے۔ایک وقت میں وہ وزیر اعظم کی دوڑ میں بھی شامل تھے، مگر انھیں اپنے روایتی حریف یوسف رضا گیلانی کے ہاتھوں اس محاذ پر شکست ہوئی۔

وہ 2011 تک وزیر خارجہ رہے۔ریمنڈڈیوس معاملے پر اختلافات کے باعث وہ پارٹی سے الگ ہوگئے۔بعد ازاں وہ تحریک انصاف کا حصہ بنے۔ انھیں نائب صدر کا عہدہ دیا گیا۔جاوید ہاشمی کے پارٹی کا حصہ بننے کے بعد ان کی جانب سے اعتراض اٹھایا گیا۔اس دوران چند اختلافات کی بھی خبریں آئیں، بالخصوص پارٹی کے جنرل سیکریٹری جہانگیر ترین اور ان کے درمیان چپقلش کی خبریں گردش کرتی رہیں۔

آئندہ انتخابات میں وہ ملتان کے اے این 156 سے الیکشن لڑیں گے۔