خورشید احمد شاہ

image description

تعارف

خورشید احمد شاہ


سید خورشید احمد شاہ پاکستان پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما ہیں۔ خورشید شاہ اپنی صلح جو طبیعت کے باعث تمام پارٹیوں کے قائدین و رہنماؤں سے اچھے تعلقات رکھتے ہیں۔

پیپلز پارٹی کے کئی مشکل مواقعوں میں خورشید شاہ نے اپنی دانش مندی اور تدبر سے بہترین حل پیش کیے اور دوسری پارٹیوں سے اختلافات کے موقع پر بھی ثالث کا کردار ادا کیا۔

پیدائش و تعلیم

خورشید احمد شاہ 20 اپریل 1952 کو صوبہ سندھ کے شہر سکھر میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے گورنمنٹ اسلامیہ سائنس کالج سکھر سے تاریخ میں ماسٹرز اور وکالت کی ڈگری حاصل کی۔ پیشے کے لحاظ سے خورشید شاہ وکیل اور بزنس مین ہیں۔

سیاسی سفر

خورشید شاہ نے اپنے سیاسی سفر کا آغاز سنہ 1988 کے انتخابات سے کیا جب وہ پہلی بار پیپلز پارٹی کے ٹکٹ پر سکھر سے رکن سندھ اسمبلی منتخب ہوئے۔

پیپلز پارٹی کے مختلف ادوار میں وہ تعلیم، ٹرانسپورٹ، امپورٹ، تجارت اور اطلاعات کے صوبائی وزیر رہے۔

خورشید شاہ سنہ 1990 میں پہلی بار قومی اسمبلی کے رکن بنے۔ اس کے بعد 1993، 1997، 2002، 2008 اور 2013 کے انتخابات میں وہ مسلسل فتح یاب ہو کر رکن قومی اسمبلی بنتے رہے۔

سنہ 1993 میں بے نظیر بھٹو کے دوسرے دور حکومت میں وہ وفاقی وزیر تعلیم رہے۔

سنہ 2002 میں انہیں چیف الیکشن کمشنر کی جانب سے پارلیمانی کمیٹی کا چیئرمین مقرر کیا گیا۔

سنہ 2008 کے انتخابات میں فتح کے بعد انہیں لیبر، مین پاور اینڈ اوور سیز پاکستانیز کی وزارت کا قلمدان سونپا گیا۔ اس وزارت کو 2009 میں دو حصوں میں تقسیم کردیا گیا جس کے بعد خورشید شاہ لیبر اور مین پاور کے وزیر رہے۔

سنہ 2010 سے 2013 تک خورشید شاہ کو وزارت مذہبی امور کا اضافی قلمدان بھی دیا گیا۔ اسی دوران سنہ 2008 سے 2013 تک وہ قومی اسمبلی میں پیپلز پارٹی کے پارلیمانی لیڈر بھی رہے۔

سنہ 2013 کے انتخابات میں شکست کے بعد جب پیپلز پارٹی اپوزیشن بنچوں پر بیٹھی تو خورشید شاہ کو قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر مقرر کیا گیا۔ وہ قومی اسمبلی کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے چیئرمین بھی رہے۔

خورشید شاہ کا حلقہ انتخاب این اے 199 سکھر کم شکار پور 2 رہا، اب یہ حلقہ شکار پور 2 ہے۔